Tajurbe Ki Sarhad Per

تجربے کی سرحد پر

راگ ڈوب جاتے ہیں

ساز ٹوٹ جاتے ہیں

آسماں کے گوشوں میں

ان گنت ستاروں کے

دیپ بجھنے لگتے ہیں

دن کی دھوپ میں اکثر

وصل ممکنہ کے سب عہد چھوڑ دیتے ہیں

باتوں میں کھنک ناپید

اور چمک نگاہوں میں

ماند پڑتی جاتی ہے

ریشمین لہجے بھی

کھردرے سے لگتے ہیں

صحبتوں میں پہلی سی

بے خودی نہیں رہتی

چہرۂ رفاقت پر زردی

چھانے لگتی ہے

جذب عشق کو تھک کر

نیند آنے لگتی ہے

تجربے کی سرحد پر آ کے بھید کھلتا ہے

کوئی بھی تعلق ہو، ایک سا نہیں رہتا

ماہ طلعت زاہدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(753) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mah Talat Zahidi, Tajurbe Ki Sarhad Per in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 9 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mah Talat Zahidi.