Karoroon Saal Ka Dekha Hua Tamasha Hai

کروڑوں سال کا دیکھا ہوا تماشا ہے

کروڑوں سال کا دیکھا ہوا تماشا ہے

یہ رقص زیست کہ بے قصد و بے ارادہ ہے

عجیب موج سبک سیر تھی ہوائے جہاں

گزر گئی تو کوئی نقش ہے نہ جادہ ہے

نشاط لمحہ کی وہ قیمتیں چکائی ہیں

کہ اب ذرا سی مسرت پہ دل لرزتا ہے

اکیلا میں ہی نہیں اے تماشہ گاہ جہاں

جو سب کو دیکھ رہا ہے وہ خود بھی تنہا ہے

اسی سے رشتۂ دل دل اسی رو گرداں

اسی کو ڈھونڈ رہا ہوں اسی سے جھگڑا ہے

محمود ایاز

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1010) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mahmood Ayaz, Karoroon Saal Ka Dekha Hua Tamasha Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a , and the type of this Nazam is Urdu Poetry. Also there are 36 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mahmood Ayaz.