Poetry From Book "Baadal Jhuktay Pani Par" By Mahmood Nasir Malik

محمود ناصر ملک کی کتاب 'بادل جھکتے پانی پر' سے تمام شاعری

بادل جھکتے پانی پر

Baadal Jhuktay Pani Par

مجھے خوابوں سے آگے کا نگر بھی خواب لگتا ہے

Mujhay Khwabon Se Agay Ka Nagar Bhi Khwab Lagta Hae

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

بہے جاتا ہے خوابوں کا جو دریا خواب کے اندر

Bahay Jata Hae Khwabon Ka Jo Darya Khwaab Kay Andar

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

وہ میرے نام پر چونکا بہت ہے

Woh Meray Naam Par Chaonka Bahut Hae

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

رنگ اور خوشبو باتیں کرنے لگتے ہیں

Rang Aor Khushboo Baten Karnay Lagtay Hain

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

تھکن سے چور ہوتے جا رہے ہیں

Thakan Se Choor Hotay Ja Rahay Hain

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

شکست خواب کا کوئی نشاں رہنے نہیں دیں گے

Shikest E Khwaab Ka Koi Nishan Rehnay Nahin Den Ge

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

تیرے نام کا گھاؤ سچ ہے

Teray Naam Ka Ghao Sach Hae

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

جہاں بارود پھٹتا ہے، فنا کا رقص کرتا ہے

Jahan Barood Phatta Hae, Fana Ka Raqs Karta Hae

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک

تیری شام کا پہلا تارا مجھ سے تھا

Teri Sham Ka Pehla Tara Mujh Se Tha

(Mahmood Nasir Malik) محمود ناصر ملک