Tujh Se Shikwah Nah Koi Ranj Hai Tanhai Ka

تجھ سے شکوہ نہ کوئی رنج ہے تنہائی کا

تجھ سے شکوہ نہ کوئی رنج ہے تنہائی کا

تھا مجھے شوق بہت انجمن آرائی کا

کچھ تو آشوب ہوا اور ہوس کی ہے شکار

اور کچھ کام بڑھا ہے مری بینائی کا

آئی پھر نافۂ امروز سے خوشبوئے وصال

کھل گیا پھر کوئی در بند پذیرائی کا

میں نے پوشیدہ بھی کر رکھا ہے در پردۂ شعر

اور بھرم کھل بھی گیا ہے مری دانائی کا

یعنی اس بار بھی وہ خاک اڑی ہے کہ مجھے

ایک کھٹکا سا لگا رہتا ہے رسوائی کا

شاعری کام ہے میرا سو میں کہتا ہوں غزل

یہ عبث شوق نہیں قافیہ پیمائی کا

مہتاب حیدر نقوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(278) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mahtab Haider Naqvi, Tujh Se Shikwah Nah Koi Ranj Hai Tanhai Ka in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 41 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mahtab Haider Naqvi.