Qisse Meri Ashafta Nawai K Buhat Thay

قصے مری آشفتہ نوائی کے بہت تھے

قصے مری آشفتہ نوائی کے بہت تھے

چرچے تری انگشت نمائی کے بہت تھے

دنیا کی طلب ہی سے نہ فرصت ہوئی ورنہ

ارمان ترے در کی گدائی کے بہت تھے

کچھ دل ہی نہ مائل ہوا اس راہ پہ ورنہ

سامان تو جنت کی کمائی کے بہت تھے

کل شب مرے کردار پہ تنقید کی شب تھی

کردار میں پہلو بھی برائی کے بہت تھے

آزار کی خصلت بھی تھی لوگوں میں نمایاں

کچھ شوق بھی اس دل کو بھلائی کے بہت تھے

اب ساتھ نہیں ہے بھی تو شکوہ نہیں اخترؔ

احسان بھی مجھ پر مرے بھائی کے بہت تھے

مجید اختر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(402) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majeed Akhtar, Qisse Meri Ashafta Nawai K Buhat Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majeed Akhtar.