Har Waqt Fikar Merg Ghribanh Chahiye

ہر وقت فکر مرگ غریبانہ چاہئے

ہر وقت فکر مرگ غریبانہ چاہئے

صحت کا ایک پہلو مریضانہ چاہئے

دنیائے بے طریق میں جس سمت بھی چلو

رستے میں اک سلام رفیقانہ چاہئے

آنکھوں میں امڈے روح کی نزدیکیوں کے ساتھ

ایسا بھی ایک دور کا یارانہ چاہئے

کیا پستیوں کی ذلتیں کیا عظمتوں کے فوز

اپنے لیے عذاب جداگانہ چاہئے

اب درد شش بھی سانس کی کوشش میں ہے شریک

اب کیا ہو اب تو نیند کو آ جانا چاہئے

روشن ترائیوں سے اترتی ہوا میں آج

دو چار گام لغزش مستانہ چاہئے

امجدؔ ان اشک بار زمانوں کے واسطے

اک ساعت بہار کا نذرانہ چاہئے

مجید امجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(290) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majeed Amjad, Har Waqt Fikar Merg Ghribanh Chahiye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad, Social Urdu Poetry. Also there are 59 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad, Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majeed Amjad.