Safar Ki Mouj Main Thay Waqt Ke Gubhar Main Thay

سفر کی موج میں تھے وقت کے غبار میں تھے

سفر کی موج میں تھے وقت کے غبار میں تھے

وہ لوگ جو ابھی اس قریۂ بہار میں تھے

وہ ایک چہرے پہ بکھرے عجب عجب سے خیال

میں سوچتا تو وہ غم میرے اختیار میں تھے

وہ ہونٹ جن میں تھا میٹھی سی ایک پیاس کا رس

میں جانتا تو وہ دریا مرے کنار میں تھے

مجھے خبر بھی نہ تھی اور اتفاق سے کل

میں اس طرف سے جو گزرا وہ انتظار میں تھے

میں کچھ سمجھ نہ سکا میری زندگی کے وہ خواب

ان انکھڑیوں میں جو تیرے تھے کس شمار میں تھے

میں دیکھتا تھا وہ آئے بھی اور چلے بھی گئے

ابھی یہیں تھے ابھی گرد روزگار میں تھے

میں دیکھتا تھا اچانک یہ آسماں یہ کرے

بس ایک پل کو رکے اور پھر مدار میں تھے

ہزار بھیس میں سیار موسموں کے سفیر

تمام عمر مری روح کے دیار میں تھے

مجید امجد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3351) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majeed Amjad, Safar Ki Mouj Main Thay Waqt Ke Gubhar Main Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 78 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majeed Amjad.