پھیلی ہوئی ہے دہر میں سب کوزہ گری ہے

پھیلی ہوئی ہے دہر میں سب کوزہ گری ہے

دل جس سے فروزاں ہے عجب کوزہ گری ہے

ایسے ہی نہیں ہوگئی تخلیق یہ دنیا

کر غور عوامل پہ سبب کوزہ گری ہے

اک نامِ محمد جوسماعت سے ہوا مس

تخلیق کی معراج پہ اب کوزہ گری ہے

لفظوں کے جھمیلے میں الجھتا ہوا شاعر

آنکھوں سے عیاں ہوتی طلب کوزہ گری ہے

قرآن کے اوراق میں ہے قصہء یوسف

حیراں تھا سبھی مصر غضب کوزہ گری ہے

آ تیری بھی تشکیل کیے دیتا ہوں پھر سے

برسات ہے توحید کی جب کوزہ گری ہے

اب خاک کی افلاک پہ ہونی ہے منادی

ماجد پہ کٹھن آخری شب کوزہ گری ہے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(334) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.