Alfaz Ko Qartas Ki Soli Per Charhaya

الفاظ کو قرطاس کی سولی پہ چڑھایا

الفاظ کو قرطاس کی سولی پہ چڑھایا

پھر چاک پہ اس مصرعِ اولی کو گھمایا

کچھ دیر خیالات کی بارش میں رہا گم

ہونٹوں کو ترے نقش کیا شعر بنایا

ایسے بھی مضامین تھے مر جاتے سفر میں

ہم نے ہی انہیں بولنا چلنا ہے سکھایا

اندھوں کی طرح بھاگتا تھا خواہشوں کی اور

ہلچل میں رہِ زیست کی کیا کیا ہے کمایا

ہر بار نیا زخم روایت سے جڑا تھا

ترکے میں ملا بوجھ بہر طور اٹھایا

بستر پہ مرے سلوٹیں ہیں دکھ کی علامت

اک درد مسلسل میں نے پہلو میں سلایا

اندر سے امڈنے لگے پھر تازہ خیالات

جب نخلِ سخن حالتِ مستی میں ہلایا

تھے وجد میں اوراق بھی اور لوح و قلم بھی

حال ارض و سماوات کا ماجد نے سنایا

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(285) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Alfaz Ko Qartas Ki Soli Per Charhaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.