Baap Zinda Phir Raha Hai Or Bete Mar Gaye

باپ زندہ پھر رہا ہے اور بیٹے مر گئے

باپ زندہ پھر رہا ہے اور بیٹے مر گئے

بوڑھے برگد کے اچانک کتنے حصے مر گئے

تھا محبت کا وظیفہ اس لیے شاداب تھے

آنکھ سوئی باغباں کی اور پودے مر گئے

ذہن و دل میں خوف تھا یہ سانس رکنی ہے ضرور

ڈر کے قیدی دیکھیے پھر ڈرتے ڈرتے مر گئے

دے رہا ہے مجھ کو وہ رزقِ سخن آغاز سے

ورنہ میرے جیسے کتنے آۓ کتنے مر گئے

اک طرف تھی عیش و عشرت کی فضا میراث میں

اور کچھ اسلاف کے غم ڈھوتے ڈھوتے مر گئے

اف درندوں کی بقا معصوم جانیں لے اڑی

کچھ شکم میں کچھ زمیں پر پاوں دھرتے مر گئے

خودفریبی سے مزین زندگی کے روزوشب

بدنصیبی جھوٹ کہتے جھوٹ سنتے مر گئے

داستانِ عشق میں ماجد نیا کردار ہے

مجھ سے پہلے فیض و جالب لکھتے لکھتے مر گئے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(379) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Baap Zinda Phir Raha Hai Or Bete Mar Gaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.