Bedakhal Dil Se Main Ne Kiya Khawahishaat Ko

بے دخل دل سے میں نے کیا خواہشات کو

بے دخل دل سے میں نے کیا خواہشات کو

حیرت میں ڈال آیا ہوں میں کا ئنات کو

قرطاس کی دھمال پہ نظریں جمائیے

ٹپکے گا خون لکھوں گا جب واردات کو

ہم نے الگ بسائی ہے دنیا فریب کی

پیغام جا کے دیجیے کینہ صفات کو

ہے ساتویں جہت بھی کوئی تو بتا مجھے

دیکھے ہی جا رہا ہوں تری شش جہات کو

تاریخ، دِیں فروشوں میں لکھے گی ان کا نام

جو شکل دے رہے ہیں نئی واقعات کو

آۓ اجل دبوچ لے قصہ تمام ہو

کس نے کہا ترستا ہوں آبِ حیات کو

یہ غیر کا نہیں کسی اپنے کا کام ہے

پہچانتا ہوں اپنے پراۓ کے ہاتھ کو

لگتا ہے سکھ کا سانس نہیں آپ کو عزیز

ماجد نہ طول دیجیے ہر ایک بات کو

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(357) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Bedakhal Dil Se Main Ne Kiya Khawahishaat Ko in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.