Jab Tak Hawa K Sath Marasim Bahal Thay

جب تک ہوا کے ساتھ مراسم بحال تھے

جب تک ہوا کے ساتھ مراسم بحال تھے

اشجار بھی پرندوں کا رکھتے خیال تھے

دشتِ جنوں میں سایہ بھی لگتا تھا منفرد

اُس پر شکستہ قدموں سےجھڑتےوبال تھے

مجھ پر کڑکتی دھوپ تھی سو ہاپنے لگا

چھاوں میں بیٹھے لوگ بھی کتنے نڈھال تھے

ہر اک سفر کو کہتا رہا الوداع میں

میرے لیے تو راستے بھی پُرملال تھے

جن کے لیے جلاۓ تھے ہر گام پر دیے

سب تیرگی کے عادی تھےوہمی کمال تھے

یزداں سے ہو رہی تھی مری رات گفتگو

وجدان میں بھٹکتے ہوۓ کچھ سوال تھے

مجھ دربدر کو خاک نےدی اس لیے جگہ

مٹی سے میل کھاتے ہوۓ خدوخال تھے

ممکن نہیں تھا مرضی کی تعبیر مانگتے

ماجد ہمارے خواب بھی تو یرغمال تھے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(420) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Jab Tak Hawa K Sath Marasim Bahal Thay in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.