Karna Hai Ab Safar Mujhe Taza Hawa K Sath

کرنا ہے اب سفر مجھے تازہ ہوا کے ساتھ

کرنا ہے اب سفر مجھے تازہ ہوا کے ساتھ

گفت و شنید جاری ہےمیری خدا کے ساتھ

ممکن ہے آسمان کے سینے کو چیر دیں

کچھ سسکیاں روانہ ہو ئی ہیں دعا کے ساتھ

اب اس سے بڑھ کے عاجزی کی کیا مثال دوں

دفنا دیا ہے زعم کو اندھی انا کے ساتھ

اک بوجھ ہے دھرا ہوا دل کی حدود پر

ہوگا مرے وجود سے رخصت قضا کے ساتھ

میں اپنے زاویے سے پرکھتا ہوں دہر کو

اور انتہا کو سوچتا ہوں ابتدا کے ساتھ

اکثر میں سانس لینے سے کرتا ہوں اجتناب

یعنی کے جی رہا ہوں میں تیری رضا کے ساتھ

ماجد بھی تیری خلق میں شامل ہے اے خدا

ایسے نہ بے رخی برت اپنے گدا کے ساتھ

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1126) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Karna Hai Ab Safar Mujhe Taza Hawa K Sath in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.