Kheerat Main Wasaal Nahi Chahiye Mujhe

خیرات میں وصال نہیں چاہیے مجھے

خیرات میں وصال نہیں چاہیے مجھے

یوں عشق میں کمال نہیں چاہیے مجھے

ہر ایک یاد اس کی سلیقے سے ہو جدا

ہو زندگی وبال نہیں چاہیے مجھے

قدموں کا میرے شور فلک تک سنائی دے

بے ربط سی دھمال نہیں چاہیے مجھے

میں نے بھی راہِ عشق میں کرنا ہے کچھ نیا

فرہاد کی مثال نہیں چاہیے مجھے

رستہ دکھا کے تجھ سے بڑا رہنما ہے کون

ہر لمحہ پُر ملال نہیں چاہیے مجھے

میں قطع کر رہا ہوں اذیت کا سلسلہ

سو یادِ خوش جمال نہیں چاہیے مجھے

مجھ پر بھی زندگی کی گرہ وا کرے کوئی

الجھا ہوا سوال نہیں چاہیے مجھے

ماجد میں روند ڈالوں گا خوابوں کی سرزمیں

ہر پل نیا خیال نہیں چاہیے مجھے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(339) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Kheerat Main Wasaal Nahi Chahiye Mujhe in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.