Kiya Khabar Kab Tak Hajoom E Deher Ka Hissa Rahoon

کیا خبر کب تک ہجومِ دہر کا حصہ رہوں

کیا خبر کب تک ہجومِ دہر کا حصہ رہوں

درمیاں میں دین و دنیا کے یونہی اٹکا رہوں

ظلم سہہ کر وحشیوں کے ہاتھ پر بیعت کروں

جسم و جاں چیخیں مسلسل اور میں ڈرتا رہوں

اب تغیر مانگتا ہے زندگی کا ہر ورق

یادِ ماضی بے سبب کیوں تجھ سے میں لپٹا رہوں

صبر کے سارے مدارج چاکری کرتے پھریں

بانٹ دوں ساری سبیلیں اور خود پیاسا رہوں

اب مری تخلیق کے اسباب سے پردہ اٹھا

عرش والے کس لیے میں فرش پر بے جا رہوں

امن کے نعرے تماری ذات تک محدود ہیں

کب تلک لاشیں اٹھاوں چیتھڑے چنتا رہوں؟

میں اپاہج سوچ کا حامل نہیں ہوں واعظا

کفر کے فتوے لگاوں کفر میں سنتا رہوں؟

ظلم ماجد اس سے بڑھ کر اور کیا ہوگا یہاں

صف میں بیناوں کی شامل ہو کے بھی اندھا رہوں

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(342) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Kiya Khabar Kab Tak Hajoom E Deher Ka Hissa Rahoon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.