Mera Har Lafz Ghayeel Hai

مرا ہر لفظ گھائل ہے

وہ کم کم بولنے والی

نہ لب کو کھولنے والی

کہاں وہ دھول جیسی ہے

سراپا پھول جیسی ہے

تمھیں بتلاوں کیا ہے وہ

نسیمِ صبح کا جھونکا ترو تازہ ہوا ہے وہ

ہے گویا مصرعِ اولی

کہ جس کے بعد شاعر کی بڑھے جاتی ہے بےچینی

کہ جب تک مصرعِ ثانی نہیں آتا تخیل میں

تصور نامکمل کا مکمل ہو نہیں پاتا

وہ رہتا ہے تذبذب میں عجب لے میں عجب ڈھب میں

عجب اک حادثے نے کل ہلایا تن بدن میرا

پھر اس کے بعد کا منظر میں کیا تحریر میں لاوں

فقط اتنا سمجھ لو تم قلم لکھنے پہ مائل ہے

مرا ہر لفظ گھائل ہے۔مرا ہر لفظ گھائل ہے

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(322) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Mera Har Lafz Ghayeel Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.