Tumhare Hijr Main Taza Ghazal Banata Hoon

تمہارے ہجر میں تازہ غزل بناتا ہوں

تمہارے ہجر میں تازہ غزل بناتا ہوں

کبھی ردیف کبھی قافیہ اٹھاتا ہوں

ہمارے اشک ہمیں تک رہیں تو اچھا ہے

چراغ جلتے ہوئے اس لیے بجھاتا ہوں

قلم دوات مری تیرگی کے ساتھی ہیں

ورق پہ کھینچ کے اندر کا کرب لاتا ہوں

جدائی بانٹ رہا ہے وہ قادرِ مطلق

یہی رضا ہے تری چل میں سر جھکاتا ہوں

جہاں پہ لوگ محبت سے حظ اٹھاتے ہیں

وہاں پہ بیٹھ کہ میں تیرا غم مناتا ہوں

اتار پھینکوں گا تجھ کو میں دل کی مسند سے

جو ٹھان لیتا ہوں آخر میں کر دکھاتا ہوں

خلل دماغ کا ماجد ڈبو گیا مجھ کو

نجانے عشق پہ الزام کیوں لگاتا ہوں

ماجد جہانگیر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(340) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Majid Jahangir, Tumhare Hijr Main Taza Ghazal Banata Hoon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 54 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Majid Jahangir.