Makhmoor Saeedi Poetry, Makhmoor Saeedi Shayari

مخمور سعیدی - Makhmoor Saeedi

1938 - 2010 تانی

مشہور شاعر مخمور سعیدی کی شاعری ۔ نظمیں اور غزلیں

وہ دور نشاط دیدہ و دل جیسے بس ابھی گزرا ہی تو ہے

مخمور سعیدی

یاد پھر بھولی ہوئی ایک کہانی آئی

مخمور سعیدی

یہ کیسا ربط ہوا دل کو تیری ذات کے ساتھ

مخمور سعیدی

سن لی صدائے کوہ ندا اور چل پڑے

مخمور سعیدی

شہر اجڑے ہوئے خوابوں کے بسائے کیا کیا

مخمور سعیدی

سینے میں کسک بن کے اترنے کے لیے ہے

مخمور سعیدی

مجھ میں کسی کا عکس نہ پرتو خالی آئینہ ہوں میں

مخمور سعیدی

نہ کم ہوا ہے نہ ہو سوز اضطراب دروں

مخمور سعیدی

نہ رستہ نہ کوئی ڈگر ہے یہاں

مخمور سعیدی

لجا لجا کے ستاروں سے مانگ بھرتی ہے

مخمور سعیدی

لکھ کر ورق دل سے مٹانے نہیں ہوتے

مخمور سعیدی

لجا لجا کے ستاروں سے مانگ بھرتی ہے

مخمور سعیدی

لکھ کر ورق دل سے مٹانے نہیں ہوتے

مخمور سعیدی

لجا لجا کے ستاروں سے مانگ بھرتی ہے

مخمور سعیدی

لکھ کر ورق دل سے مٹانے نہیں ہوتے

مخمور سعیدی

لجا لجا کے ستاروں سے مانگ بھرتی ہے

مخمور سعیدی

لکھ کر ورق دل سے مٹانے نہیں ہوتے

مخمور سعیدی

کتنی دیواریں اٹھی ہیں ایک گھر کے درمیاں

مخمور سعیدی

لبوں پہ ہے جو تبسم تو آنکھ پر نم ہے

مخمور سعیدی

لفظوں کے سیہ پیراہن میں لپٹی ہوئی کچھ تنویریں ہیں

مخمور سعیدی

جب کوئی شام حسیں نذر خرابات ہوئی

مخمور سعیدی

کسک پرانے زمانے کی ساتھ لایا ہے

مخمور سعیدی

خوار و رسوا نہ سر کوچہ و بازار ملے

مخمور سعیدی

جب کوئی شام حسیں نذر خرابات ہوئی

مخمور سعیدی

Records 1 To 24 (Total 43 Records)