Bujh Gayi Dil Ki Roshni Raah Dhuwan Dhuwan Hoi

بجھ گئی دل کی روشنی راہ دھواں دھواں ہوئی

بجھ گئی دل کی روشنی راہ دھواں دھواں ہوئی

صبح چلے کہاں سے تھے شام ہمیں کہاں ہوئی

شوق کی راہ پر خطر طے تو کر آئے ہم مگر

نذر حوادث سفر دولت جسم و جاں ہوئی

عشق و جنوں کے واردات دیدہ و دل کے سانحات

بیتی ہوئی ہر ایک بات دور کی داستاں ہوئی

کوئی بھی اب نہیں رہا جس کو شریک غم کہیں

دور طرب کی یاد بھی شامل رفتگاں ہوئی

لٹ گئی کیسے دفعتاً روشنیوں کی انجمن

آ کے کہاں سے خیمہ زن ظلمت بے کراں ہوئی

کس کو خبر کہ ہم نے کیا خواب بنے ہیں عمر بھر

کس سے کہیں کہ زندگی کس لیے رائیگاں ہوئی

طرز بیاں تو بے قیاس تھے ترے غم زدوں کے پاس

بول اٹھی نگاہ یاس بند اگر زباں ہوئی

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(295) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Bujh Gayi Dil Ki Roshni Raah Dhuwan Dhuwan Hoi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.