Nah Rasta Nah Koi Dagar Hai Yahan

نہ رستہ نہ کوئی ڈگر ہے یہاں

نہ رستہ نہ کوئی ڈگر ہے یہاں

مگر سب کی قسمت سفر ہے یہاں

سنائی نہ دے گی دلوں کی صدا

دماغوں میں وہ شور و شر ہے یہاں

ہواؤں کی انگلی پکڑ کر چلو

وسیلہ یہی معتبر ہے یہاں

نہ اس شہر بے حس کو صحرا کہو

سنو اک ہمارا بھی گھر ہے یہاں

پلک بھی جھپکتے ہو مخمورؔ کیوں

تماشا بہت مختصر ہے یہاں

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(823) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Nah Rasta Nah Koi Dagar Hai Yahan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.