Shehr Ujre Howay Khowaboon Ke Basaye Kya Kya

شہر اجڑے ہوئے خوابوں کے بسائے کیا کیا

شہر اجڑے ہوئے خوابوں کے بسائے کیا کیا

نیند میں ہم نے در و بام سجائے کیا کیا

ہر قدم پر کسی منزل کا گزرتا تھا گماں

راہ چلتے ہوئے منظر نظر آئے کیا کیا

ہم کہ پھر تیری حقیقت پہ نظر کر نہ سکے

زندگی تو نے ہمیں خواب دکھائے کیا کیا

اک ستارہ کہ چمکتا ہے بہت دور کہیں

ظلمت شب میں ہمیں پاس بلائے کیا کیا

موسم گل میں ترا ہم سے جدا ہو جانا

یاد آئے تو ہمیں خون رلائے کیا کیا

کھو سے جاتے ہیں کہیں اس کا خیال آتے ہی

ہم اسے بھول کے بھی بھول نہ پائے کیا کیا

مندمل ہو گئے سب زخم پرانے تو مگر

دل کی اک تازہ کسک ہم کو ستائے کیا کیا

کیا مسافت ہے کہ حیران کیے دیتی ہے

ہر گزرتا ہوا پل سامنے لائے کیا کیا

آنسوؤں نے تری تصویر بھی دھندلی کر دی

نقش پانی پہ مگر ہم نے بنائے کیا کیا

لکھنے بیٹھیں جو کبھی عمر گزشتہ کا حساب

ایک اک لمحہ ہمیں یاد دلائے کیا کیا

کیا کہیں وہ بھی ہمیں راس نہ آئی مخمورؔ

اک خوشی جس کے لئے رنج اٹھائے کیا کیا

مخمور سعیدی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(840) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Makhmoor Saeedi, Shehr Ujre Howay Khowaboon Ke Basaye Kya Kya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 43 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Makhmoor Saeedi.