Rasm Hi Neend Ki Ankhoon Se

رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

رسم ہی نیند کی آنکھوں سے اٹھا دی گئی کیا

یا مرے خواب کی تعبیر بتا دی گئی کیا

آسماں آج ستاروں سے بھی خالی کیوں ہے

دولت گریۂ جاں رات لٹا دی گئی کیا

وہ جو دیوار تھی اک عشق و ہوس کے مابین

موسم شوق میں اس بار گرا دی گئی کیا

اب تو اس کھیل میں کچھ اور مزا آنے لگا

جان بھی داؤ پہ اس بار لگا دی گئی کیا

آج دیوانے کے لہجے کی کھنک روشن ہے

اس کی آواز میں آواز ملا دی گئی کیا

آج بیمار کے چہرے پہ بہت رونق ہے

پھر مسیحائی کی افواہ اڑا دی گئی کیا

منظور ہاشمی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(495) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Manzoor Hashmi, Rasm Hi Neend Ki Ankhoon Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 18 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Manzoor Hashmi.