Bas Aik Apne Hi Qadmon Ki Chap Santa Hon

بس ایک اپنے ہی قدموں کی چاپ سنتا ہوں

بس ایک اپنے ہی قدموں کی چاپ سنتا ہوں

میں کون ہوں کہ بھرے شہر میں بھی تنہا ہوں

جہاں میں جسم تھا تو نے وہاں تو ساتھ دیا

وہاں بھی آ کہ جہاں میں تمام سایا ہوں

وہ ایک موڑ بھی اس رہ پہ آئے گا کہ جہاں

ملا کے ہاتھ تو بولے گا میں تو چلتا ہوں

تری جدائی کا غم ہے نہ تیرے ملنے کا

میں اپنی آگ میں دن رات جلتا رہتا ہوں

گئے وہ روز کہ تو باعث قرار تھی جب

تری جھلک سے بھی اب تو اداس ہوتا ہوں

مرے بغیر ہے ممکن کہاں تری تکمیل

مجھے پکار کہ میں ہی ترا کنارا ہوں

کبھی تو ڈوب سہی شام کے سمندر میں

کہ میں سدا ہی جواہر نکال لایا ہوں

محمود شام

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(381) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mehmood Sham, Bas Aik Apne Hi Qadmon Ki Chap Santa Hon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 60 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mehmood Sham.