Umar Guzri Ke Tri Dhun Mein Chala Tha Darya

عمر گزری کہ تری دھن میں چلا تھا دریا

عمر گزری کہ تری دھن میں چلا تھا دریا

جا بہ جا گھومتا ہے آج بھی پگلا دریا

بنتی جاتی ہیں گہر کتنی ہی بھولی یادیں

یہ مرا دل ہے کہ ٹھہرا ہوا گہرا دریا

نہ کسی موج کا نغمہ ہے نہ گرداب کا رقص

جانے کیا بات ہے خاموش ہے سارا دریا

تھل کے سینے پہ پگھل جاتی ہے جب چاند کی برف

دور تک ریت پہ بہتا ہے سنہرا دریا

ہائے وہ رنگ بھرے پیار کے مسکن پتن

ہائے وہ ناؤ سے رہ رہ کے لپٹتا دریا

شامؔ آکاش پہ جب پھیلتا ہے دن کا لہو

ڈوب جاتا ہے کسی سوچ میں بہتا دریا

محمود شام

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(464) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mehmood Sham, Umar Guzri Ke Tri Dhun Mein Chala Tha Darya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 60 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mehmood Sham.