Usay Hum Bhi Bhool Baithy Nah Kar Is Ka Zikar To Bhi

اسے ہم بھی بھول بیٹھے نہ کر اس کا ذکر تو بھی

اسے ہم بھی بھول بیٹھے نہ کر اس کا ذکر تو بھی

کوئی چاک اگر ہو ظاہر تو کریں اسے رفو بھی

چلو چل کے پوچھ آئیں کہ خزاں کی اس گلی میں

کبھی آ چکا ہو شاید کوئی سیل رنگ و بو بھی

اڑی تشنگی کے کوچے میں وہ گرد اک طرف سے

ہم اٹھا سکے نہ طاقوں سے گرے ہوئے سبو بھی

ابھی کیسے بھول جاؤں میں یہ واقعہ سفر میں

ابھی گرد رفتگاں بھی ہے جگہ جگہ لہو بھی

اس ارم ارم زمیں پر کہ بہار امنڈ رہی ہے

کوئی پھول اگر کھلا دے مری بے نمو بھی

تری انجمن کی رونق میں نہ فرق آئے گا کچھ

ہمیں چپ بٹھانے والے کبھی ہم سے گفتگو بھی

مرے خال و خد کو صورت کا فروغ دینے والو

کسی نقش میں دکھاؤ مرا زخم شعلہ رو بھی

محشر بدایونی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(249) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mehshar Badayuni, Usay Hum Bhi Bhool Baithy Nah Kar Is Ka Zikar To Bhi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 69 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mehshar Badayuni.