Agay Jamal Yaar Ke Mazoor Ho Gaya

آگے جمال یار کے معذور ہو گیا

آگے جمال یار کے معذور ہو گیا

گل اک چمن میں دیدۂ بے نور ہو گیا

اک چشم منتظر ہے کہ دیکھے ہے کب سے راہ

جوں زخم تیری دوری میں ناسور ہو گیا

قسمت تو دیکھ شیخ کو جب لہر آئی تب

دروازہ شیرہ خانے کا معمور ہو گیا

پہنچا قریب مرگ کے وہ صید ناقبول

جو تیری صید گاہ سے ٹک دور ہو گیا

دیکھا یہ ناؤ نوش کہ نیش فراق سے

سینہ تمام خانۂ زنبور ہو گیا

اس ماہ چاردہ کا چھپے عشق کیونکے آہ

اب تو تمام شہر میں مشہور ہو گیا

شاید کسو کے دل کو لگی اس گلی میں چوٹ

میری بغل میں شیشۂ دل چور ہو گیا

لاشہ مرا تسلی نہ زیر زمیں ہوا

جب تک نہ آن کر وہ سر گور ہو گیا

دیکھا جو میں نے یار تو وہ میرؔ ہی نہیں

تیرے غم فراق میں رنجور ہو گیا

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(484) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Agay Jamal Yaar Ke Mazoor Ho Gaya in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.