Berawi O Zulf Yaar Hai Ronay Se Kam Yaan

بے روی و زلف یار ہے رونے سے کام یاں

بے روی و زلف یار ہے رونے سے کام یاں

دامن ہے منہ پہ ابر نمط صبح و شام یاں

آوازہ ہی جہاں میں ہمارا سنا کرو

عنقا کے طور زیست ہے اپنی بہ نام یاں

وصف دہن سے اس کے نہ آگے قلم چلے

یعنی کیا ہے خامے نے ختم کلام یاں

غالب یہ ہے کہ موسم خط واں قریب ہے

آنے لگا ہے متصل اس کا پیام یاں

مت کھا فریب عجز عزیزان حال کا

پنہاں کیے ہیں خاک میں یاروں نے دام یاں

کوئی ہوا نہ دست بسر شہر حسن میں

شاید نہیں ہے رسم جواب سلام یاں

ناکام رہنے ہی کا تمہیں غم ہے آج میرؔ

بہتوں کے کام ہو گئے ہیں کل تمام یاں

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(635) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Berawi O Zulf Yaar Hai Ronay Se Kam Yaan in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.