Ishq Kya Kya Aftein Lata Raha

عشق کیا کیا آفتیں لاتا رہا

عشق کیا کیا آفتیں لاتا رہا

آخر اب دوری میں جی جاتا رہا

مہر و مہ گل پھول سب تھے پر ہمیں

چہرئی چہرہ ہی وہ بھاتا رہا

دل ہوا کب عشق کی رہ کا دلیل

میں تو خود گم ہی اسے پاتا رہا

منہ دکھاتا برسوں وہ خوش رو نہیں

چاہ کا یوں کب تلک ناتا رہا

کچھ نہ میں سمجھا جنون و عشق میں

دیر ناصح مجھ کو سمجھاتا رہا

داغ تھا جو سر پہ میرے شمع ساں

پاؤں تک مجھ کو وہی کھاتا رہا

کیسے کیسے رک گئے ہیں میرؔ ہم

مدتوں منہ تک جگر آتا رہا

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(700) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Ishq Kya Kya Aftein Lata Raha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.