Kis Husn Se Kahoon Main Is Ki Khush Akhtery Ki

کس حسن سے کہوں میں اس کی خوش اختری کی

کس حسن سے کہوں میں اس کی خوش اختری کی

اس ماہرو کے آگے کیا تاب مشتری کی

رکھنا نہ تھا قدم یاں جوں باد بے تامل

سیر اس جہاں کی رہرو پر تو نے سرسری کی

شبہا بحال سگ میں اک عمر صرف کی ہے

مت پوچھ ان نے مجھ سے جو آدمی گری کی

پائے گل اس چمن میں چھوڑا گیا نہ ہم سے

سر پر ہمارے اب کے منت ہے بے پری کی

پیشہ تو ایک ہی تھا اس کا ہمارا لیکن

مجنوں کے طالعوں نے شہرت میں یاوری کی

گریے سے داغ سینہ تازہ ہوئے ہیں سارے

یہ کشت خشک تو نے اے چشم پھر ہری کی

یہ دور تو موافق ہوتا نہیں مگر اب

رکھیے بنائے تازہ اس چرخ چنبری کی

خوباں تمہاری خوبی تا چند نقل کریے

ہم رنجہ خاطروں کی کیا خوب دلبری کی

ہم سے جو میرؔ اڑ کر افلاک چرخ میں ہیں

ان خاک میں ملوں کی کاہے کو ہمسری کی

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(570) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Kis Husn Se Kahoon Main Is Ki Khush Akhtery Ki in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.6 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.