Koch To Kah Wasl Ki Phir Raat Chali Jati Hai

کچھ تو کہہ وصل کی پھر رات چلی جاتی ہے

کچھ تو کہہ وصل کی پھر رات چلی جاتی ہے

دن گزر جائیں ہیں پر بات چلی جاتی ہے

رہ گئے گاہ تبسم پہ گہے بات ہی پر

بارے اے ہم نشیں اوقات چلی جاتی ہے

ٹک تو وقفہ بھی کر اے گردش دوراں کہ یہ جان

عمر کے حیف ہی کیا سات چلی جاتی ہے

یاں تو آتی نہیں شطرنج زمانہ کی چال

اور واں بازی ہوئی مات چلی جاتی ہے

روز آنے پہ نہیں نسبت عشقی موقوف

عمر بھر ایک ملاقات چلی جاتی ہے

شیخ بے نفس کو نزلہ نہیں ہے ناک کی راہ

یہ ہے جریان منی دھات چلی جاتی ہے

خرقہ مندیل و ردا مست لیے جاتے ہیں

شیخ کی ساری کرامات چلی جاتی ہے

ہے مؤذن جو بڑا مرغ مصلی اس کی

مستوں سے نوک ہی کی بات چلی جاتی ہے

پاؤں رکتا نہیں مسجد سے دم آخر بھی

مرنے پر آیا ہے پر لات چلی جاتی ہے

ایک ہم ہی سے تفاوت ہے سلوکوں میں میرؔ

یوں تو اوروں کی مدارات چلی جاتی ہے

میر تقی میر

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(335) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mir Taqi Mir, Koch To Kah Wasl Ki Phir Raat Chali Jati Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 269 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mir Taqi Mir.