Ashk Ho Ankhain Bhigona Ho Tu Phir

اشک ہو آنکھیں بھگونا ہو تو پھر

اشک ہو آنکھیں بھگونا ہو تو پھر

آنکھ میں سپنا سلونا ہو تو پھر

کب تلک بخیہ گری کا شوق بھی

عمر بھر سینا پرونا ہو تو پھر

دوست انٹرنیٹ پر اچھا چلو

اور گلے جو لگ کے رونا ہو تو پھر

وہ مری دل جوئی کو حاضر مگر

اس کا ہونا بھی نہ ہونا ہو تو پھر

اس کو پانے کی طلب پر سوچ لو

اس کو پانا اس کو کھونا ہو تو پھر

نازکی تو سیکھی اس نے پھول سے

تتلیوں کا بوجھ ڈھونا ہو تو پھر

یوں جو خوش ہو اس کو ہنستا دیکھ کر

اس کا ہنسنا اس کا رونا ہو تو پھر

یوں تو گجروں سے کلائی سج گئی

چاہ اس کی چاندی سونا ہو تو پھر

لوگ کہتے ہیں کہ دنیا گول ہے

مفلسی کونا بہ کونا ہو تو پھر

احمدؔ اپنے دل کو خوش کرنے چلے

اور غم دل کا کھلونا ہو تو پھر

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(508) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Ashk Ho Ankhain Bhigona Ho Tu Phir in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.