Bujhe Ager Badan K Kuch Chirag Tere Hijar Main

بجھے اگر بدن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

بجھے اگر بدن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

جلا لیے سخن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

چمن خزاں خزاں ہو جب بجھا بجھا ہوا ہو دل

کریں بھی کیا چمن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

شب فراق پر ہوا شب وصال کا گماں

مہک اٹھے ملن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

اداسیوں کے حبس میں جو تیری یاد آ گئی

تو جل اٹھے پون کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

سو کیوں نہ دل کے داغ گن کے کاٹ لیجے آج شب

گنے تھے کل گگن کے کچھ چراغ تیرے ہجر میں

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(442) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Bujhe Ager Badan K Kuch Chirag Tere Hijar Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.