Hawa Chale Ya Ruke Khush Numa Samaa Ho Jaye

ہوا چلے یا رکے خوش نما سماں ہو جائے

ہوا چلے یا رکے خوش نما سماں ہو جائے

یہ سات رنگ کا آنچل جو بادباں ہو جائے

سلگ رہا ہوں کئی دن سے اپنے کمرے میں

دریچہ کھولوں تو دنیا دھواں دھواں ہو جائے

بدل کے نام سنا رکھی ہے اسے ہر بات

یہ ایک بات بتا دوں تو رازداں ہو جائے

میں اپنے آپ کو چھوڑ آیا ہوں کہیں پیچھے

کچھ اور تیز چلوں میں تو کارواں ہو جائے

یہیں کہیں وہ مرے ساتھ تھا میں سوچتا ہوں

یہاں گھڑی دو گھڑی کوئی سائباں ہو جائے

یہ انتشار ہے ترتیب نو نہ جان اسے

کہ کائنات کی ہر شے یہاں وہاں ہو جائے

سرشک غم کو تبسم کی سیپ میں رکھیے

کہ راز راز رہے حال دل بیاں ہو جائے

پروں پہ تتلی کے پیغام لکھ کے بھیجوں میں

ہوا کا جھونکا کسی دن خبر رساں ہو جائے

جہاں کی ریت ہے کہرام مچنے لگتا ہے

کسی کو عشق ہو یا مرگ ناگہاں ہو جائے

ابھی تو جسم مرا دھوپ کی امان میں ہے

پرائے سائے میں آ کر نہ بے اماں ہو جائے

ہے اس جہاں کی ہر بات عام سی لیکن

جو سچے شعر میں ڈھل جائے داستاں ہو جائے

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(492) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Hawa Chale Ya Ruke Khush Numa Samaa Ho Jaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.