Hum Apni Haqiqat Kis Se Kaheen Hain Piyase K Seerab Hain Hum

ہم اپنی حقیقت کس سے کہیں ہیں پیاسے کہ سیراب ہیں ہم

ہم اپنی حقیقت کس سے کہیں ہیں پیاسے کہ سیراب ہیں ہم

ہم صحرا ہیں اور جل تھل ہیں ہیں دریا اور پایاب ہیں ہم

اب غم کوئی نہ سرشاری بس چلنے کی ہے تیاری

اب دھوپ ہے پھیلی آنگن میں اور کچی نیند کے خواب ہیں ہم

ہاں شمع تمنا بجھ بھی گئی اب دل تیرہ تاریک بہت

اب حدت غم نہ جوش جنوں اے دشت طلب برفاب ہیں ہم

یہ تنہائی یہ خاموشی تارا بھی نہیں اس شام کوئی

کچھ داغ سمیٹے سینے میں تنہا تنہا مہتاب ہیں ہم

ہم جس میں ڈوب کے ابھرے ہیں وہ دریا کیسا دریا تھا

یہ کیسا افق ہے جس کی اتھاہ گہرائی میں غرقاب ہیں ہم

ہم مثل شرر ہیں جگنو ہیں ہم تیرہ شب کے آنسو ہیں

ہم نجم سحر ہم رشک قمر ہاں ہر صورت شب تاب ہیں ہم

اک حزن و ملال کا سیل بلا سب خواب بہا کر لے بھی گیا

پھر پھول کھلے من آنگن میں پھر دیکھ ہمیں شاداب ہیں ہم

لاکھوں ہم جیسے ملتے ہیں نایاب نہیں ہیں ہم احمدؔ

ہاں ان کے لیے جو دل سے ملے وہ جانتے ہیں کم یاب ہیں ہم

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(459) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Hum Apni Haqiqat Kis Se Kaheen Hain Piyase K Seerab Hain Hum in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.