Iss Tarhaan Bethe Ho Kiyon Bezar Se

اس طرح بیٹھے ہو کیوں بیزار سے

اس طرح بیٹھے ہو کیوں بیزار سے

بھر گیا دل راحت دیدار سے

اشک کیا ڈھلکا ترے رخسار سے

گر پڑا ہوں جیسے میں کہسار سے

در کھلا تو میری ہی جانب کھلا

سر پٹختا رہ گیا دیوار سے

ایک دن خاموش ہو کر دیکھیے

لطف گر اٹھنے لگے تکرار سے

دیکھ لو یہ زرد آنکھیں خشک ہونٹ

پوچھتے ہو حال کیا بیمار سے

قدر کیجئے فیض جس جس سے ملے

سایۂ دیوار ہے دیوار سے

کل مبادا ہو یہاں ویرانیاں

ڈر رہا ہوں گرمئ بازار سے

جھوٹ چلتا ہے مگر اک آدھ بار

اے قصیدہ خواں حذر تکرار سے

بک رہی ہے زندگی کے مول موت

جائیے لے آئیے بازار سے

مانگتے ہیں ووٹ اس پر طنطنہ

پیچ و خم نکلے نہیں دستار سے

بند کر ٹی وی کی خبریں بے خبر

چل کوئی کالم سنا اخبار سے

دوستی کی محفلیں قائم رہیں

یہ دعا ہے اپنی پالنہار سے

تجھ میں احمدؔ عیب ہیں لاکھوں مگر

واسطہ ہے تیرا کس ستار سے

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(594) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Iss Tarhaan Bethe Ho Kiyon Bezar Se in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.