Surag Jada O Manzil Ager Nahi Milta

سراغ جادہ و منزل اگر نہیں ملتا

سراغ جادہ و منزل اگر نہیں ملتا

ہمیں کہیں سے جواز سفر نہیں ملتا

لکھیں بھی دشت نوردی کا کچھ سبب تو کیا

بجز کہ قیس کو لیلیٰ کا گھر نہیں ملتا

یہاں فصیل انا حائل مسیحائی

وہاں وہ لوگ جنہیں چارہ گر نہیں ملتا

ہزار کوچۂ نکہت میں ڈالیے ڈیرے

مگر وہ پھول سر رہ گزر نہیں ملتا

پھر آبیاریٔ نخل سخن نہیں ہوتی

دل حزیں جو پس چشم تر نہیں ملتا

پیام شوق کو گیتوں میں ڈھالیے کیوں کر

مزاج باد سبک بھی اگر نہیں ملتا

چلو کہ پھر سے رفیقوں کی بزم سونی ہے

چلو کہ سنگ ملامت کو سر نہیں ملتا

بشر بہ نام بشر تو بہت ہیں دنیا میں

بشر کی خوبیوں والا مگر نہیں ملتا

چلو پھر اس کے جھروکے میں پھول رکھ آئیں

سخن کوئی جو اگر معتبر نہیں ملتا

جہاں میں ایک تمہی منفرد نہیں احمدؔ

یہاں تو کوئی بھی مثل دگر نہیں ملتا

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(414) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Surag Jada O Manzil Ager Nahi Milta in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.