Tote Hue Diye Ko Sunsaan Shab Main Rakha

ٹوٹے ہوئے دیے کو سنسان شب میں رکھا

ٹوٹے ہوئے دیے کو سنسان شب میں رکھا

اس پر مری زباں کو حد ادب میں رکھا

کس نے سکھایا سائل کو بھوک کا ترانہ

پھر کس نے لا کے کاسہ دست طلب میں رکھا

مفلس کی چھت کے نیچے کمھلا گئے ہیں بچے

پھولوں کو لا کے کس نے چشم غضب میں رکھا

پروردگار نے تو تقویٰ کی بات کی تھی

تم نے فضیلتوں کو نام و نسب میں رکھا

دراصل تم سے مل کر میں خود سے مل سکوں گا

بس ایک ہی سبب ہے دار السبب میں رکھا

بس دل کی انجمن ہے یادوں کے نسترن ہیں

اب اور کیا ہے باقی اس جاں بہ لب میں رکھا

احمدؔ میں بات دل کی کہتا تو کس سے کہتا

نغمہ سکوت کا تھا شور و شغب میں رکھا

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(569) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Tote Hue Diye Ko Sunsaan Shab Main Rakha in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.