Zakham Ka Indmaal Hote Hue

زخم کا اندمال ہوتے ہوئے

زخم کا اندمال ہوتے ہوئے

میں نے دیکھا کمال ہوتے ہوئے

ہجر کی دھوپ کیوں نہیں ڈھلتی

جشن شام وصال ہوتے ہوئے

دے گئی مستقل خلش دل کو

آرزو پائمال ہوتے ہوئے

لوگ جیتے ہیں جینا چاہتے ہیں

زندگانی وبال ہوتے ہوئے

کس قدر اختلاف کرتا ہے

وہ مرا ہم خیال ہوتے ہوئے

پئے الزام آ رکیں مجھ پر

ساری آنکھیں سوال ہوتے ہوئے

آج بھی لوگ عشق کرتے ہیں

سامنے کی مثال ہوتے ہوئے

خود سے ہنس کر نہ مل سکے احمدؔ

خوش سخن خوش خصال ہوتے ہوئے

محمد احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(594) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mohammad Ahmad, Zakham Ka Indmaal Hote Hue in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 28 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Social, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mohammad Ahmad.