Dar Ke Kisi Se Choup Jata Hai Jaisay Sanp Khazanay Main

ڈر کے کسی سے چھپ جاتا ہے جیسے سانپ خزانے میں

ڈر کے کسی سے چھپ جاتا ہے جیسے سانپ خزانے میں

زر کے زور سے زندہ ہیں سب خاک کے اس ویرانے میں

جیسے رسم ادا کرتے ہوں شہروں کی آبادی میں

صبح کو گھر سے دور نکل کر شام کو واپس آنے میں

نیلے رنگ میں ڈوبی آنکھیں کھلی پڑی تھیں سبزے پر

عکس پڑا تھا آسمان کا شاید اس پیمانے میں

دبی ہوئی ہے زیر زمیں اک دہشت گنگ صداؤں کی

بجلی سی کہیں لرز رہی ہے کسی چھپے تہہ خانے میں

دل کچھ اور بھی سرد ہوا ہے شام شہر کی رونق سے

کتنی ضیا بے سود گئی شیشے کے لفظ جلانے میں

میں تو منیرؔ آئینے میں خود کو تک کر حیران ہوا

یہ چہرہ کچھ اور طرح تھا پہلے کسی زمانے میں

منیر نیازی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3876) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Munir Niazi, Dar Ke Kisi Se Choup Jata Hai Jaisay Sanp Khazanay Main in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 130 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.7 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Munir Niazi.