Mehfil Aara Thay Magar Phir Kam Numa Hotay Gaye

محفل آرا تھے مگر پھر کم نما ہوتے گئے

محفل آرا تھے مگر پھر کم نما ہوتے گئے

دیکھتے ہی دیکھتے ہم کیا سے کیا ہوتے گئے

نا شناسی دہر کی تنہا ہمیں کرتی گئی

ہوتے ہوتے ہم زمانے سے جدا ہوتے گئے

منتظر جیسے تھے در شہر فراق آثار کے

اک ذرا دستک ہوئی در دم میں وا ہوتے گئے

حرف پردہ پوش تھے اظہار دل کے باب میں

حرف جتنے شہر میں تھے حرف لا ہوتے گئے

وقت کس تیزی سے گزرا روزمرہ میں منیرؔ

آج کل ہوتا گیا اور دن ہوا ہوتے گئے

منیر نیازی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1577) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Munir Niazi, Mehfil Aara Thay Magar Phir Kam Numa Hotay Gaye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 130 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Munir Niazi.