Saat Hijran Hai Ab Kaisay Jahanon Main Rahon

ساعت ہجراں ہے اب کیسے جہانوں میں رہوں

ساعت ہجراں ہے اب کیسے جہانوں میں رہوں

کن علاقوں میں بسوں میں کن مکانوں میں رہوں

ایک دشت لا مکاں پھیلا ہے میرے ہر طرف

دشت سے نکلوں تو جا کر کن ٹھکانوں میں رہوں

علم ہے جو پاس میرے کس جگہ افشا کروں

یا ابد تک اس خبر کے رازدانوں میں رہوں

وصل کی شام سیہ اس سے پرے آبادیاں

خواب دائم ہے یہی میں جن زمانوں میں رہوں

یہ سفر معلوم کا معلوم تک ہے اے منیرؔ

میں کہاں تک ان حدوں کے قید خانوں میں رہوں

منیر نیازی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(3091) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Munir Niazi, Saat Hijran Hai Ab Kaisay Jahanon Main Rahon in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 130 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 5 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Munir Niazi.