Aaine Ko Iss Liye Khud Per Yaqeen Aaya Nahi

آئینے کو اس لیے خود پر یقیں آیا نہیں

آئینے کو اس لیے خود پر یقیں آیا نہیں

سامنے ایسا کبھی نقشِ حسیں آیا نہیں

اے گرفتارِ بلائے عشق کون آیا ہے پھر

غم جسے محسوس ہوتا تھا حزیں آیا نہیں

ہے جمالِ چشم پر کم ہے غزالی چال بھی

ہاتھ میں صیاد کے لیکن کہیں آیا نہیں

اک شبِ نوخیز اتری ہے شفق کے پار سے

چاندنی پھیلی ہے پھر بھی دل نشیں آیا نہیں

ایک تنہائی مری مونس رہی ساتھی رہی

سانپ اس سے پہلے زیرِ آستیں آیا نہیں

خواب کے منظر بھی ہوتے ہیں ذرا سی دیر کے

وہ مجھے چھوتا رہا لیکن قریں آیا نہیں

خاورؔ اس دہلیزِ عظمت پر جھکے ہیں اس لیے

اس انا کے در پہ کوئی شہ نشیں آیا نہیں

مرید عباس خاور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1008) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mureed Abbas Khawar, Aaine Ko Iss Liye Khud Per Yaqeen Aaya Nahi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.8 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mureed Abbas Khawar.