Moot Se Zindagi Dushwar Hui Jati Hai

موت سے زندگی دشوار ہوئی جاتی ہے

موت سے زندگی دشوار ہوئی جاتی ہے

آ کہ اب لذتِ گل خار ہوئی جاتی ہے

ٹھن گئی خود سے کہ جب چھوڑ گئے یار مجھے

طبع کیوں پھر بھی وفادار ہوئی جاتی ہے

روش حسن پرستی کا نتیجہ ہے یہی

روح تک جسم سے بیزار ہوئی جاتی ہے

وہ جو ہوتی تھی مہک خون کے رشتوں میں کبھی

اب وہی بوئے ستم گار ہوئی جاتی ہے

اہل وعدہ و وفا چھوڑ گئے بستی کو

اب یہ عبرت گہ اقدار ہوئی جاتی ہے

بستیاں بسنے لگیں کرہِ مریخ پہ جب

تو زمیں راہ کی دیوار ہوئی جاتی ہے

خاورؔ اب کیا ہو یہاں سود و زیاں کا جھگڑا

ہر دکاں شہر کی مسمار ہوئی جاتی ہے

مرید عباس خاور

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(1077) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Mureed Abbas Khawar, Moot Se Zindagi Dushwar Hui Jati Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope Urdu Poetry. Also there are 8 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.3 out of 5 stars. Read the Love, Sad, Friendship, Bewafa, Heart Broken, Hope poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Mureed Abbas Khawar.