Daur Kuch Ahal Junoo Ki Be Qarari Kiijiye

دور کچھ اہل جنوں کی بے قراری کیجیے

دور کچھ اہل جنوں کی بے قراری کیجیے

ہو سکے تو ان کی تھوڑی غم گساری کیجیے

جن کے بستر سے نہیں جاتی کوئی سلوٹ کبھی

ان کی آنکھوں میں وفا کے خواب جاری کیجیے

عشق کی قسمت یہی ہے عشق کا منصب یہی

جاگیے شب بھر یوں ہی اختر شماری کیجیے

نوچیے زخم جگر کو آنکھ بھر کر روئیے

اور کب تک ہجر میں یوں آہ و زاری کیجیے

بھیجئے کوئی بلاوا کوئی چٹھی بھیجئے

اپنے ان پردیسیوں سے شہر داری کیجیے

لوگ ہیں تیار ہجرت کے لیے اس شہر سے

پھر کوئی تازہ نیا فرمان جاری کیجیے

پھر کوئی تازہ بپا ہونے کو ہے اک معرکہ

نہر فرات کربلا کو پھر سے جاری کیجیے

کام آئے گا نہ کوئی مشکلوں میں دیکھنا

جس قدر بھی دوستوں سے وضع داری کیجیے

تشنۂ تکمیل ٹھہرے بات نہ کوئی نبیلؔ

گفتگو جتنی بھی ہے دل میں وہ ساری کیجیے

آئے گا کب سانس ورنہ دوسرا تجھ کو نبیلؔ

دل کے زخموں کی نہ ایسے پردہ داری کیجیے

نبیل احمد نبیل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(259) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nabeel Ahmed Nabeel, Daur Kuch Ahal Junoo Ki Be Qarari Kiijiye in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Social Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.4 out of 5 stars. Read the Social poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nabeel Ahmed Nabeel.