Har Badan Ko Ab Yahan Aisa Gehan Lagnay Laga

ہر بدن کو اب یہاں ایسا گہن لگنے لگا

ہر بدن کو اب یہاں ایسا گہن لگنے لگا

جس کو دیکھو اب وہی بے پیرہن لگنے لگا

جب سے ڈھالا ہے ستاروں میں نگاہ شوق کو

چاند سے بڑھ کر تمہارا بانکپن لگنے لگا

میری جانب پیار سے دیکھے نہ کوئی اک نظر

حلقۂ احباب تیری انجمن لگنے لگا

زندہ لاشوں کی طرح لگنے لگی انسانیت

پیرہن اب آدمیت کا کفن لگنے لگا

میں نے رکھا ہے ہمیشہ اپنی دھرتی کا بھرم

اس لیے بھی مجھ سے وہ چرخ کہن لگنے لگا

میں نے رکھا تھا جہاں پر پھول تیرے نام کا

اس زمیں کا اتنا حصہ اب چمن لگنے لگا

جب سے سچائی کے رستے کو کیا ہے منتخب

نوک خنجر سے چھدا اپنا بدن لگنے لگا

رفتہ رفتہ نوک خامہ پر ہوس چھانے لگی

دھیرے دھیرے رائیگاں کار سخن لگنے لگا

یہ جو باندھا ہے گریباں سے جنوں کے ہاتھ کو

اہل دانش کو مگر دیوانہ پن لگنے لگا

جس گلستاں پر لہو چھڑکا تھا ہم نے اے نبیلؔ

ڈالی ڈالی آج وہ اک دشت و بن لگنے لگا

نبیل احمد نبیل

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(389) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nabeel Ahmed Nabeel, Har Badan Ko Ab Yahan Aisa Gehan Lagnay Laga in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 51 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nabeel Ahmed Nabeel.