Tujh Ko Gir Meri Zarorat Hai

تجھ کو گر میری ضرورت ہے

تجھ کو گر میری ضرورت ہے

تو پھر جان حیات

اپنے فرسودہ محبت کے خیالات بدل

ہجر و غم رنج و الم وصل و فراق

اس کٹھن وقت میں

بے جا سی شکایات نہ کر

دیکھ وہ سب بھی تو میں

دیکھ کہ پہنچا ہوں یہاں

جس کو تو دیکھ لے اک بار

تو تیری آنکھیں

عمر بھر سکتے کے عالم سے نہ نکل پائیں

دیکھ میں اس عجب مقام پہ

آنے سے قبل

ایسی راہوں سے گزر آیا ہوں

جہاں سے تو

ایک پل کو بھی جو گزرے

تو تیرے زخم پا

بن کے ناسور تجھے

درد میں رکھیں ہر دم

دیکھ میں چاہت و الفت کا تو قائل مگر

ہر ایک چیز ہر ایک رشتہ زمانے میں

محبت ہے مگر۔۔۔۔

دیکھ اس وقت میرے دیس میں

پھیلی ہوئی ہے

ہر طرف خون کی بارود کی

نفرت کی پھوار

سن ذرا کونے میں روتے ہوئے

بچے کی پکار

دیکھ بارود کے ہاتھوں سے یہ

لتھڑا ہوا جسم

دیکھ روزی کو بھٹکتا ہوا

بچوں کا وہ باپ

دیکھ پھر سو گئے

اس دیس کے بچے بھوکے

دیکھ اس ماں کی طرف دیکھ

کہ جس کی آنکھیں

نظریں کھو بیٹھی ہیں روتے ہوئے

اس آس پہ کہ

لوٹ آئے گا وہ اس کا

جوان لعل کبھی

گھر سے نکلا تھا جو

ہاتھوں میں ڈگریوں کو لئے۔۔۔

آج تک لوٹ کے آیا نہیں

عمریں بیتیں۔۔۔

مجھ کو یہ درد رکھا کرتے ہیں

نیندوں سے پرے۔۔۔۔

سوچ اس درد میں

چاہت کی کسے خواہش ہو

سوچ اس درد میں راحت کی

کسے خواہش ہو

مجھ کو جو کرنا ہے

وہ اب ان کے لئے کرنا ہے

مجھ کو جینا ہے تو بس

ان کے لئے جینا ہے

میں نے مانا کہ نہیں اور کوئی

تجھ سا حسیں۔۔۔

پر مجھے سوچ کی

اس لہر نے آ گھیرا ہے

جس سے چھٹکارا میری جان

اب ممکن ہی نہیں

تجھ کو گر میری ضرورت ہے

تو پھر جان حیات

اپنے فرسودہ محبت کے خیالات بدل

ہاتھ میں ہاتھ دے

اور پھر تو میرے ساتھ میں چل۔۔۔

ندیم گلانی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(2722) ووٹ وصول ہوئے

متعلقہ شاعری

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nadeem Gullani, Tujh Ko Gir Meri Zarorat Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Nazam, and the type of this Nazam is Love Urdu Poetry. Also there are 10 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.1 out of 5 stars. Read the Love poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nadeem Gullani.