Poetry of Nafas Ambalvi, Urdu Shayari of Nafas Ambalvi

نفس انبالوی کی شاعری

یہ عشق کے خطوط بھی کتنے عجیب ہیں

Yeh Ishq Ke Khutoot Bhi Kitney Ajeeb Hain

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

ہمیں دنیا فقط کاغذ کا اک ٹکڑا سمجھتی ہے

Hamein Duniya Faqat Kaghaz Ka Ik Tukda Samjhti Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

ہماری زندگی جیسے کوئی شب بھر کا جلسہ ہے

Hamari Zindagi Jaisay Koi Shab Bhar Ka Jalsa Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

ہماری راہ سے پتھر اٹھا کر پھینک مت دینا

Hamari Raah Se Pathar Utha Kar Pheink Mat Dena

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

وہ بھیڑ میں کھڑا ہے جو پتھر لئے ہوئے

Woh Bheer Mein Khara Hai Jo Pathar Liye Howay

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

نگاہوں کے مناظر بے سبب دھندھلے نہیں پڑتے

Nigahon Ke Manazair Be Sabab Dohndhlay Nahi Parte

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

ملتے ہیں مسکرا کے اگرچہ تمام لوگ

Mlitay Hain Muskura Ke Agarchay Tamam Log

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

مرے خیال کی پرواز بس تمہیں تک تھی

Marey Khayal Ki Parwaz Bas Tumhe Tak Thi

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

مرنے کو مر بھی جاؤں کوئی مسئلہ نہیں

Marnay Ko Mar Bhi Jaoon Koi Masla Nahi

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

سنا ہے وہ بھی مرے قتل میں ملوث ہے

Suna Hai Woh Bhi Marey Qatal Mein Mulawis Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

ساری گواہیاں تو مرے حق میں آ گئیں

Saari Gawahiyan To Marey Haq Mein Aa Gayeen

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

زندگی وقت کے صفحوں میں نہاں ہے صاحب

Zindagi Waqt Ke Safhon Mein Nihaan Hai Sahib

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

زخم ابھی تک تازہ ہیں ہر داغ سلگتا رہتا ہے

Zakham Abhi Tak Taza Hain Har Dagh Sulagta Rehta Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

جب بھی اس دیوار سے ملتا ہوں رو پڑتا ہوں میں

Jab Bhi Is Deewar Se Milta Hon Ro Parta Hon Mein

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

تو دریا ہے تو ہوگا ہاں مگر اتنا سمجھ لینا

To Darya Hai To Hoga Haan Magar Itna Samajh Lena

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

تاریکیاں قبول تھیں مجھ کو تمام عمر

Tarikhiyan Qubool Theen Mujh Ko Tamam Umar

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اٹھا لایا کتابوں سے وہ اک الفاظ کا جنگل

Utha Laya Kitabon Se Woh Ik Alfaaz Ka Jungle

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

انکار کر رہا ہوں تو قیمت بلند ہے

Inkaar Kar Raha Hon To Qeemat Buland Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اسے گماں ہے کہ میری اڑان کچھ کم ہے

Usay Guma Hai Ke Meri Udaan Kuch Kam Hai

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اس شہر میں خوابوں کی عمارت نہیں بنتی

Is Shehar Mein Khowabon Ki Imarat Nahi Banti

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اپنے دراز قد پہ بہت ناز تھا جنہیں

–apne Daraaz Qad Pay Bohat Naz Tha Jinhein

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اب کہاں تک پتھروں کی بندگی کرتا پھروں

Ab Kahan Tak Patharon Ki Bandagi Karta Phiron

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اب تک تو اس سفر میں فقط تشنگی ملی

Ab Tak To Is Safar Mein Faqat Tashnagi Mili

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

اب ان کی خواب گاہوں میں کوئی آواز مت کرنا

Ab Un Ki Khawab Gaahon Mein Koi Awaz Mat Karna

(Nafas Ambalvi) نفس انبالوی

Records 1 To 24 (Total 45 Records)

Urdu Poetry & Shayari of Nafas Ambalvi. Read Ghazals, Two Liness, Sad Poetry, Social Poetry of Nafas Ambalvi, Ghazals, Two Liness, Sad Poetry, Social Poetry and much more. There are total 45 Urdu Poetry collection of Nafas Ambalvi published online.