Ghar Kisi Ka Bhi Ho Jalta Nahi Dekha Jata

گھر کسی کا بھی ہو جلتا نہیں دیکھا جاتا

گھر کسی کا بھی ہو جلتا نہیں دیکھا جاتا

ہم سے چپ رہ کے تماشہ نہیں دیکھا جاتا

تیری عظمت ہے تو چاہے تو سمندر دے دے

مانگنے والے کا کاسہ نہیں دیکھا جاتا

جب سے صحرا کا سفر کاٹ کے گھر لوٹا ہوں

تب سے کوئی بھی ہو پیاسا نہیں دیکھا جاتا

یہ عبادت ہے عبادت میں سیاست کیسی

اس میں کعبہ یا کلیسا نہیں دیکھا جاتا

میرے لہجہ پہ نہ جا قول کا مفہوم سمجھ

بات سچی ہو تو لہجہ نہیں دیکھا جاتا

عکس ابھرے گا نفسؔ گرد ہٹا دے پہلے

دھندھلے آئینے میں چہرہ نہیں دیکھا جاتا

نفس انبالوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(790) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nafas Ambalvi, Ghar Kisi Ka Bhi Ho Jalta Nahi Dekha Jata in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 45 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.2 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nafas Ambalvi.