Hum Pay Woh Meharban Kuch Kam Hai

ہم پہ وہ مہربان کچھ کم ہے

ہم پہ وہ مہربان کچھ کم ہے

اس لیے خوش بیان کچھ کم ہے

مٹ گیا ہوں پر اس کی نظروں میں

اب بھی یہ امتحان کچھ کم ہے

شہر میں یوں زمیں تو کافی ہے

نیلگوں آسمان کچھ کم ہے

غم کے سامان کچھ زیادہ ہیں

اس مطابق مکان کچھ کم ہے

سر چھپاؤں تو پاؤں جلتے ہیں

مجھ پہ یہ سائبان کچھ کم ہے

زندگی اور دے عذاب مجھے

مجھ پہ عائد لگان کچھ کم ہے

فصل بارود ہے پہاڑوں پر

اس برس زعفران کچھ کم ہے

نفس انبالوی

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(272) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Nafas Ambalvi, Hum Pay Woh Meharban Kuch Kam Hai in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 45 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.5 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Nafas Ambalvi.