Aay Meh Hijar Kya Kahin Kisi Thakan Safar Mein Thi

اے مہ ہجر کیا کہیں کسی تھکن سفر میں تھی

اے مہ ہجر کیا کہیں کیسی تھکن سفر میں تھی

روپ جو رہ گزر میں تھے دھوپ جو رہ گزر میں تھی

لفظ کی شکل پر نہ جا لفظ کے رنگ بھی سمجھ

ایک خبر پس خبر آج کی ہر خبر میں تھی

رات فصیل شہر میں ایک شگاف کیا ملا

خون کی اک لکیر سی صبح نظر نظر میں تھی

میری نگاہ میں بھی خواب تیری نگاہ میں خواب

ایک ہی دھن بسی ہوئی عصر رواں کے سر میں تھی

شہر پہ رتجگوں سے بھی باب افق نہ کھل سکا

وسعت بام و در نجیبؔ وسعت بام و در میں تھی

نجیب احمد

© UrduPoint.com

All Rights Reserved

(593) ووٹ وصول ہوئے

Your Thoughts and Comments

Urdu Nazam Poetry of Najeeb Ahmed, Aay Meh Hijar Kya Kahin Kisi Thakan Safar Mein Thi in Urdu. This famous Urdu Shayari is a Ghazal, and the type of this Nazam is Sad Urdu Poetry. Also there are 32 Urdu poetry collection of the poet published on the site. The average rating for this Urdu Shayari by our users is 4.9 out of 5 stars. Read the Sad poetry online by the poet. You can also read Best Urdu Nazam and Top Urdu Ghazal of Najeeb Ahmed.